Gul-e-Pazhmurda

Gul-e-Pazhmurda | A Withered Rose | Bang-e-Dra-022

Gul-e-Pazhmurda

Gul-e-Pazhmurda

Gul-e-Pazhmurda

Allam Iqbal Poetry Tashreeh in urdu

معانی: گُلِ پژمردہ: مرجھایا ہوا پھول، مراد انسانی روح جو اپنی اصل سے جدا ہو گئی ہے ۔ کس زباں سے کہوں : یعنی زبان میں بیان کی قوت نہیں ۔ تمنائے دلِ بلبل: بلبل کے دل کی آرزو مراد بلبل کا محبوب
مطلب: اس نظم میں اقبال کا مکالمہ ایک ایسے پھول سے ہوتا ہے جو مرجھا چکا ہے اور اس طرح اپنی تازگی کے علاوہ آب و تاب بھی کھو چکا ہے ۔ چنانچہ اس مرجھائے ہوئے پھول سے مخاطب ہو کر کہتے ہیں اب تیری ہیَت ہی تبدیل ہو چکی ہے ۔ اس صورت میں تجھے پھول قرار نہیں دیا جا سکتا ۔ اس کیفیت میں تو تو بلبل کے لیے بھی کشش کا سبب نہیں ہو سکتا ۔

معانی: موجِ صبا: صبح کی ہوا کی لہر ۔ گہوارہَ جُنباں : ہلتا ہوا گہوارہ، جھولا ۔ گلِ خنداں : ہنستا ہوا پھول ۔
مطلب: میں اس دور کو یاد کرتا ہوں کہ موج صبا تجھے ہلکارے دیا کرتی تھی اور اس کی آغوش تیرے لیے ہلتے ہوئے گہوارے کی مانند ہوا کرتی تھی اور باغ میں تیرا وجود مسکاہٹوں کا آئینہ دار رہتا ۔

معانی: نسیمِ صبح: صبح کی نرم ہوا ۔ تیرے دم سے: تیری وجہ سے ۔ طبلہَ عطار: عطر بیچنے والے کا خوشبووَں سے بھرا ہوا ڈبہ ۔
مطلب: صبح کی نسیم تیری خوشبو سے معطر ہوتی تھی اور یہ خوشبو پھر سارے گلستاں کو معطر کر دیتی تھی ۔

معانی : شبنم برسانا: آنسو بہانا ۔ دیدہَ گریاں : روتی ہوئی آنکھیں ۔ نہاں : چھپا ہوا ۔ دلِ ویراں : مراد افسردہ دل ۔
مطلب: آج تیری صورت دیکھ کر اے مرجھائے ہوئے پھول میری آنکھوں سے آنسو رواں ہیں ۔ اور یوں لگتا ہے کہ تیری اداسی میں میرا دل ویران پوشیدہ ہے ۔

معانی: تعبیر: خواب کا مطلب ۔
مطلب: دیکھا جائے تو تیرا وجود میری بربادی کی ایک چھوٹی سی تصویر ہے جس شے کی میری زندگی ایک خواب تھی بظاہر یوں لگتا ہے تو اس خواب کی تعبیر ہے ۔

مطلب: میں بانسری کی طرح اپنے بانسوں کے جنگل کی داستاں بیان کر رہا ہوں ۔ اے پھول تو سُن، میں اپنی اصل سے دُور رہنے کی شکایت کر رہا ہوں

Gul-e-Pazhmurda

Kis zubaan se ae gul e pazmurda tujh ko gul kahoon
Kis tarha tujh ko tamannay dil e bulbul kahoon

Thi ahsan ka nasim e subah ko iqraar tha
Nam tha sehan e gulishtan main gul e khandan taira

Taire ahsan ka nasim e subah ko iqraar tha
Bagh taire dum se goya tablay e attar tha

Tujh pe barsata hey shabnam deedah e giryan maira
Hey nihaan tairi udasi mein dil e veeran maira

Mari berbadi ke hey chhoti se aik taswer tu
Khauwab mari zindagi thi jis ke hey tabeer tu

Humcho ne az neestan e khud hekayat me kunam
Bashno ae gul az judai hey shakayat me kunam

A Withered Rose Bang-e-Dra-022

Allam Iqbal Poetry in English

How shall I call you now a flower tell me oh withered rose,

How call you that beloved for whom the nightingale’s heart glows?

The winds soft ripples cradled you and rocked your bygone hours,

And you name once was laughing rose in the country of flowers,

With the dawn breeze that received you favors you once played,

Like a perfumer’s vase your breath sweetened the garden glade.

These eyes are full and drops like dew fall thick on you again

This desolate  Heart finds dimly its own image in your pain

A record drawn in miniature of all its sorry gleaming

My life was all a life of dreams and you — you are its meaning

I tell my stories as the reed plucked from its native

Murmurs, oh rose listen” I tell the grief of hearts exiled

Full Book with Translation BANG-E-DRA

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: