Ik Danish-e-Noorani Ik Danish-e-Burhani | Bal-e-Jibril -015

Ik Danish-e-Noorani

Ik Danish-e-Noorani with Urdu Tashreeh

پہلا شعر کی تشریح
معانی: دانشِ نورانی: نور سے بھری ہوئی عقل جو انسان کے دل و دماغ کو منور کر دے ۔ اور اسے حقیقتوں کو پہچاننے کے قابل بنا دے ۔ یہ عقل نور ایمان اور نور یقین کے مترادف ہے ۔ دانش برہانی: حکمت و فلسفہ کا علم، وہ عقل جس میں فلسفیانہ دلیلوں سے کام لیا جائے ۔ یہ یقینی طور پر حقیقتوں تک نہیں پہنچاتی اور عموماً دلیلوں ہی کے اندھیرے میں چکر لگاتی رہتی ہے ۔ حیرت کی فراوانی: حیرانی کی زیادتی ۔
مطلب: اس غزل کے مطلع میں اقبال نے دانش نورانی اور دانش برہانی کے مابین فرق کو واضح کیا ہے ان کے مطابق ایک دانش تو وہ ہوتی ہے جو نور ایمان اور نور یقین کے امتزاج سے جنم لیتی ہے اور قلب و روح کو منور کر دیتی ہے ۔ اس کے برعکس دانش برہانی کا تعلق تعقل اور استدلال سے ہے جس سے حقائق تک رسائی مشکل ہو جاتی ہے ۔ اور دلائل کی بھول بھلیاں میں ہی گردش کرتی رہتی ہے ۔ اس سے انسان کے اندر تجسس میں تو اضافہ ہوضرور ہوتا ہے لیکن یہ کسی بنیادی نتیجے پر پہنچنے میں مددگار ثابت نہیں ہوتی
دوسرا شعر کی تشریح
معانی: پیکر خاکی: مٹی کا بدن، مراد انسانی جسم ۔ نگہبانی: اس کو قابو میں رکھنا مشکل ہے ۔
مطلب: انسانی جسم میں ایک ایسی شے ہے جو تیری نذر کے قابل ہے اور وہ شے روح ہے یہی سبب ہے کہ میرے لیے اس کا تحفظ ممکن نہیں ۔
تیسرا شعر کی تشریح
مطلب: فغاں : فریاد ۔ ستاروں تک: آسمان تک ۔ غزل خوانی: غزل پڑھنا، یعنی شاعری کرنا ۔
مطلب: میری آہ فریاد اب اگر ستاروں تک جا پہنچی ہے تو یہ تو ایک فطری امر ہے ۔ اس میں میرا کیا قصور ہو سکتا ہے جب کہ شعر کے ذریعے اظہار کا جوہر تو اے خدا تو نے ہی مجھے عطا کیا ہے
 چوتھاشعر کی تشریح 
معانی: تکرار: جھگڑا ۔ ازرانی : سستا یعنی ذلیل ہونا ۔
مطلب: انسان جس طرح سے فنا و بقا کے مراحل سے گزرتے ہیں اس سے تو اس امر کا اندازہ ہوتا ہے کہ انسانی وجود ایک نقش باطل کی طرح تھا جب چاہا اسے تیرے قبضہ قدرت نے ختم کر ڈالا لیکن یہ تو بتا کہ انسان جس کو تو نے خود تخلیق کیا اور فرشتوں سے بھی افضل قرار دیا پھر اس آسانی سے اس کو فنا کرنے اور اس کی ناقدری کیا خود تیرے لیے باعث مسرت ہے 
پانچواں شعر کی تشریح
معانی: زندیقی: ظاہری ایمان، گمراہی ۔ ننگِ مسلمانی: اسلام کو بدنام کرنے والے ۔
مطلب: تسلیم کہ مغرب کی تعلیم و تہذیب نے مجھے تو مذہب سے لا تعلق کر دیا لیکن اس عہد کے ملا پر تو مغربی تہذیب و علوم کا سایہ تک نہیں پڑا پھر کیا وجہ ہے کہ وہ نہ صرف یہ کہ مذہب سے لا تعلق ہے بلکہ اس کے لئے باعث ننگ ہو کر رہ گیا ہے ۔ کہنے کا مطلب یہ ہے کہ ملا بالعموم اپنے مفادات کے لیے اسلام کی غلط تاویلیں کر کے عام لوگوں کو اس سے منحرف کر رہے ہیں
 چھٹاشعر کی تشریح 
معانی: تقدیر شکن: تقدیر کو بدلنے والی طاقت ۔ تقریر: باتیں کرنے والی ۔ زندانی: قیدی ۔
مطلب: وہ احمق لوگ ہیں جو انسان کو تقدیر کا پابند سمجھتے ہیں جب کہ وہ تقدیر کے خلاف جدوجہد کی قوت بھی رکھتا ہے اور واقع یہ ہے کہ انسان نے اپنی بے ہمتی اور بے عملی کے سبب کسی بھی معاملے کو تقدیر کا نام دے دیا ہے حالانکہ خدا نے انسان کو وہ قوت بھی عطا کی ہے جو نامساعد حالت کو اپنی مرضی کے مطابق بدل ڈالے

Ik Danish-e-Noorani  Roman Urdu

Ik Danish-e-Noorani Ik Danish-e-Burhani
Hai Danish-e-Burhani, Hairat Ki Farawani

Iss Paikar-e-Khaaki Mein Ek Shay Hai So Woh Teri
Mere Liye Mushkil Hai Uss Shay Ki Nighabani

Ab Kya Jo Meri Afghan Pohenchi Hai Sitaron Tak
Tu Ne Hi Sikhai Thi Mujh Ko Ye Ghazal Khawani

Ho Naqsh Agar Batil, Takrar Se Kya Hasil
Kya Tujh Ko Khush Ati Hai Adam Ki Ye Arzani?

Mujh Ko To Sikha Di Hai Afrang Ne Zindeeqi
Iss Dour Ke Mullah Hain Kyun Nang-e-Musalmani

Taqdeer Shikan Quwwat Baqi Hai Abhi Iss Mein
Nadan Jise Kehte Hain Taqder Ka Zindani

Tere Bhi Sanam Khane, Mere Bhi Sanam Khane
Dono Ke Sanam Khaaki Dono Ke Sanam Faani

Reason is either luminous in English

Reason is either luminous, or it seeks proofs
Proof‐seeking reason is but an excess of wonder

Thane alone is what I possess in this handful of dust
And to keep it safe is beyond my power,O Lord

My songs of lament were all inspired by Thee
If they have reached the stars, it is no fault of mine

Art Thou pleased, O Lord, with man’s imperfection?
Why repeat a flawed attempt, and make his shame eternal?

The Western ways have tried to make me a renegade
But why are our mullahs a disgrace to Muslims?

Fools think man is a bondman of destiny
But man has still the power to break the bonds of fate

Thou hast Thy pantheon, and I have mine, O Lord!
Both have idols of dust; both have idols that die.

Full Book BAL-E-JIBRIL

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *