Apni jawlaan gaah zair aasmaa samjha tha mein | Bal-e-Jibril -014

Apni jawlaan gaah zair aasmaa samjha tha mein

Apni jawlaan gaah zair aasmaa with Urdu Tashreeh

پہلا شعر کی تشریح
معانی: جولاں گاہ: کام کا میدان ۔ زیرآسماں : آسمان کے نیچے یعنی زمین پر ۔ آب و گل: پانی اور مٹی ۔
مطلب: مطلع کے حوالے سے وہ کہتے ہیں کہ اپنی کارکردگی اور جدوجہد کو میں صرف ز میں تک محدود سمجھا تھا یہاں تک کہ پانی اور مٹی کے مابین جو ربط ہے وہی میری کائنات تھی ۔ بالفاظ دگر میں نے ایک خاص سطح سے بڑھ کر بلندی تک دیکھنے کی زحمت نہ کی
دوسرا شعر کی تشریح
معانی: بے حجابی: تری بے پردگی نے آنکھیں کھول دیں ۔
مطلب: میری نگاہوں کا طلسم اس لمحے ٹوٹ کر رہ گیا جب تو نے حجاب سے باہر آ کر اپنا جلوہ دکھایا ورنہ صورت حال یہ تھی کہ فضا میں جو نیلے بادل ہیں ان کو ہی میں نے آسماں سمجھ لیا تھا تیرے جلوے کے پر تو سے مجھ پر حقیقت منکشف ہوئی
تیسرا شعر کی تشریح
معانی: پیچ و خم: چکر ۔ مہر و ماہ و مشتری: ستاروں کے نام ۔ ہم عناں : ہم سفر ۔
شعر کی تشریح چوتھا
مطلب: عشق ہی وہ قوت تھی جس نے مجھ پر ساری حقیقت کھول کر رکھ دی ورنہ قبل ازیں اپنی کم علمی کے سبب ز میں اور آسماں کو لا انتہا اور وسیع تر سمجھ رہا تھا یعنی عشق ہی وہ قوت ہے جو شعور ذات اور شعور کائنات سے روشناس کراتی ہے
پانچواں شعر کی تشریح
معانی: رازِ محبت: محبت کا بھید ۔ داریہائے شوق: شوق کے چھپنے کی عادت ۔
مطلب: ہوا یوں کہ شوق کی پردہ داری نے ہی راز محبت فاش کر دیا اور جس کیفیت کو میں نے ضبط فغاں کا نام دیا راز محبت فاش ہونے کے بعد پتہ چلا کہ ضبط فغاں بھی عملاً فغاں بن گئی
چھٹاشعر کی تشریح 
مطلب: فی الواقعہ وہ کسی درماندہ مسافر کی صدائے دردناک تھی جسے اپنی بے خبری سے میں نے قافلے کے کوچ کے اعلان کی آواز سمجھ لیا تھا ۔

Apni jawlaan gaah zair aasmaa samjha tha mein in Roman Urdu

Apni jawlaan gaah zair aasmaa samjha tha mein
Aabb o Gel ke khail ko apna jahan samjha tha mein

Be hajabi se teri toota nigahon ka tilsam
Ik ridaye nilgon ko aasmaa samjha tha mein

Karwan thak kar fiza ke paich o khham mein reh gaya
Mehar o Mah o mushtari ko hum Anaa samjha tha mein

Ishhq ki ik jist ne tay kar diya qissa tamam
Is zameen o aasmaa ko be karaan samjha tha mein

Keh gayeen raaz e mohabbat parda daar Yahae shoq
Thi fghan woh bhi jisay zabt fghan samjha tha mein

Thi kisi darmandah rahroo ki sdae dard naak
Jis ko aawazِ Rahil karwan samjha tha mein

I thought that my racing track in English

I thought that my racing track was beneath the skies
I thought that this ordinary play of water and flowers was my universe

When You unveiled yourself, it broke the spell of universe in front of my eyes
I always thought that these blue skies were end of the universe

The Caravan of spacely bodies exhausted itself and got lost in time and space
I thought that Sun, Moon and Stars were my companions of the journey

One leap of Ishq ended all the stories I knew (by opening new world)
I thought that these heavens and skies were infinite

The Keeper of Secret of Love, revealed the secret
That seal over the lover’s woe was itself a lover’s woe too.

What I thought was a shallow call of the caravan to depart
Was merely a ordinary mournful cry of a traveler.

Full Book BAL-E-JIBRIL

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *