Asar kare na kare sun to le meri faryad | Bal-e-Jibril -005

 

Asar kare na kare sun to le meri faryad

Whether or not it moves you at least listen to my complaint | Bal-e-Jibril – 005
Sir Muhammad Allam  Iqbal also known as  Allam  Iqbal
 
 was a Philosopher, Poet and polication in British India
who is widely regarded as havin inspired the Paksitan
movement.
Born : Nov 9, 1877,  Sialkot
 
Originally Pubished : 1935
 
Book write in urdu language
 

اثر کرے نہ کرے سُن تو لے مری فریاد کی تشریح

پہلاشعر کی تشریح
معانی: مری فریاد: شکایت ۔ داد: شاباش ۔ طالب: خواہشمند ۔
مطلب: مولائے کائنات! یہ امر تو اپنی جگہ کہ میری فریاد میں اثر ہے یا نہیں تاہم اس کو سننے میں تو کوئی قباحت نہیں ہونی چاہیے کہ میں تو ان افراد میں سے ہوں جو داد کا طلب گار ہونے کے بجائے اس نوع کے جھمیلوں سے آزاد ہوتے ہیں

دوسرا شعر کی تشریح
معانی: مشتِ خاک: آدمی ۔ صرصر: تیز ہوا ۔ وسعتِ افلاک: آسمانوں کی فراخی ۔ کرم: رحمت ۔
مطلب: انسان جو ایک مشت خاک کے مانند ہے گوناگوں مصائب اور بلاؤں کے ہجوم میں گھرا ہوا ہے ۔ یہ بلائیں او ر مصائب آسمانوں کی تمام تر وسعت کا احاطہ کئے ہوئے ہیں ۔ اب اس کا اندازہ کیسے ہو کہ تیرے ذوق تخلیق میں یہ عمل قہر و غضب پر مبنی ہے یا لطف و عنایت کا حامل ہے

تیسرا شعر کی تشریح
معانی: خیمہَ گل: پھولوں کا خیمہ ۔ فصلِ بہاری: بہار کا موسم ۔ بادِ مراد: وہ ہوا جس سے خواہش پوری ہو ۔
مطلب: یہ درست ہے کہ بہار آئی تو باغوں میں پھول کھلے لیکن خزاں کے جھونکوں سے وہ سب کے سب مرجھا گئے ۔ کیا یہی وہ مختصر عرصہ زیست ہے جسے بہار کے موسم اور باد مراد سے منسوب کیا جاتا ہے

شعر کی تشریح چوتھا
معانی: غریب الدیار: بے وطن ۔ ترا خرابہ: غیر آباد جہان ۔
مطلب: خداوندا! بے شک تو نے آدم کو ایک گناہ کی پاداش میں کرہَ ارض پر جلاوطن تو کر دیا تاہم اس نے اس خراب کو ایک گلشن میں تبدیل کر دیا ظاہر ہے کہ یہ عمل تیرے فرشتوں کے بس کا روگ نہ تھا

پانچواں شعر کی تشریح
معانی: جفا طلبی: محنت مشقت ۔ دشت سادہ: صحرا، غیر آباد علاقہ ۔ بے بنیاد: جس کی کوئی بنیاد نہ ہو ۔
مطلب: یہ آدم کی محنت اور جفاکشی تھی جس نے ویران خطہَ ارض کو گل و گلزار بنا دیا ۔ یہاں کے موجود عناصر آج بھی اس حقیقت کے معترف ہیں ۔

شعر کی تشریح چھٹا
معانی: خطر پسند طبیعت: خطرے پسند کرنے والی طبیعت ۔ سازگار: درست نہیں ۔ گلستاں :باغ ۔ صیاد: شکاری ۔
مطلب: خطروں اور مشکلات سے نبردآزما ہونے والی طباءع کسی ایسے گلستان کو بھی ناپسند کرتی ہیں جہاں کوئی مدمقابل موجود نہ ہو

ساتواں شعر کی تشریح
معانی: مقام شوق: عشق کی دنیا ۔ قدسیوں : فرشتوں ۔ حوصلے ہیں زیاد: زیادہ حوصلے والے، یہاں مراد انسان ہے ۔
مطلب: اے خدا یہ جاں نثاری کا عمل تیرے فرشتوں کے بس کا نہیں ہے اس کے سزاوار تو وہی لوگ ہو سکتے ہیں جن میں جرات و ہمت کی کمی نہ ہو ۔ اس شرط پر فرشتے نہیں بلکہ آدم ہی پورا اتر سکتا ہے

Asar kare na kar in Roman Urdu

Asar kare na kare sun to le meri faryad
Nahi hai dad ka talib ye banda ay azad

 

Ye musht e khaak ye sar sar ye wusaat e aflak
Karam hai ya k sitam teri lazzat e ijad

 

Thehar saka na howa ay chaman mein khaima ay gul
Ye hai fasal e bahari ye hai baad e murad

 

Kasoorwar ghareeb ud diyar ho lekin
Tera kharaba farishte na kar sake abad

 

Meri jafa talbi ko duaen hai
Wo dasht e sada wo tera jahan e bebunyad

 

Khatar pasand tabiyat ko saazgar nahi
Wo gulistan k jahan ghaat mein na ho sayyad

 

Maqam e shauq tere qudsiyon ke bus ka nahi
Unhi ka kaam hai ye jin k hosle hain zayad

 

Bal-e-Jibril -005 in English

Whether or not it moves you at least listen to my complaint
It is not redress this free spirit seeks
 

 

This handful of dust this fiercely blowing wind and these vast limitless heavens
Is the delight you take in creation a blessing or some wanton joke

 

The tent of the rose could not withstand the wind blowing through the garden
Is this the spring season and this auspicious wind

 

I am at fault and in a foreign land
But the angels never could make habitable that wasteland of yours.

 

Gratefully remembers my love of hardship
That stark wilderness that insubstantial world of yours

 

An adventurous  spirit is ill at ease
In a garden where no hunter lies in ambush

 

The station of love is beyond the reach of your angels
Only those of dauntless courage are up to it
 

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *