Tujhe Yaad Kya Nahin Hai | Bal-e-Jibril -011

Tujhe Yaad Kya Nahin Hai

Tujhe Yaad Kya Nahin Ha with Urdu Tashreeh

پہلا شعر کی تشریح
معانی: ادب گہ محبت: پہلی محبت کی ادب گاہ ۔ نگہ: منظر ۔ تازیانہ: کوڑا ۔
مطلب: اس غزل کے مطلع میں اقبال اپنے محبوب سے مخاطب ہو کر کہتے ہیں کہ کیا تجھے وہ زمانہ یاد نہیں جب پہلے پہل میرا دل تیری جانب ملتفت ہوا تو ہم دونوں کے رویے ایک دوسرے کے جذبات سے ہم آہنگ تھے لیکن اس ادب گہ محبت میں پر تیری نگاہ کسی تازیانے سے کم نہ تھی ۔

دوسرا شعر کی تشریح
معانی: بتانِ عصرِ حاضر: نئے دور کے معشوق ۔ مدرسے: سکول، مکتب ۔ ادائے کافرانہ: محبوب کی ادا ۔ تراشِ آزرانہ: آزر کی بت تراشی کی خوبی ۔
مطلب: اس شعر میں اقبال نے عہد کی درس گاہوں سے فارغ التحصیل ہونے والے افراد کی ذہنی صلاحیت کی جانب اشارہ کیا ہے کہ یہ بے شعور لوگ کسی بت کی مانند ساکت و بے حس ہیں ۔ نہ تو ان میں کافروں کی سی خصوصیات ہیں نا ہی ان کی تراش خراش میں آذر کی سی ہنر مندی کا کوئی شائبہ دکھائی دیتا ہے بالفاظ دگر مذکورہ قسم کے افراد کی تربیت میں کوئی صلاحیت موجود نہیں ہوتی 

تیسرا شعر کی تشریح
معانی: فراغت: آرام ۔ قفس: پنجرہ ۔ آشیانہ: گھونسلہ ۔
مطلب: یہ ماحول کتنا ہی آزاد روی کا حامل ہو لیکن عملاً اس میں کہیں بھی کشادگی اور فراغت محسوس نہیں ہوتی ۔ یہ عجیب جہاں ہے جس میں نہ قید خانے کا پتہ چلتا ہے نہ ہی آشیانے کا وجود ہے ۔ دوسرے لفظوں میں ہمارا جو ماحول ہے اس پر گھٹن کی ایسی فضا محیط ہے جہاں اضطراب اور بے چینی کے سوا کچھ نہیں 

 چوتھاشعر کی تشریح   
معانی: رگِ تاک: انگور کی بیل جس سے شراب کشید کرتے ہیں ۔ میکدے: جہاں شراب ملتی ہے ۔ مغانہ: شراب بنانے والے ۔
مطلب: اقبال مالک حقیقی سے ملتمس ہیں کہ ہماری تہذیب تباہی و بربادی کے آخری مراحل میں داخل ہو چکی ہے ۔ مولا اب تیرا ہی لطف و کرم اس کی بقا اور تعمیر کا سبب بن سکتا ہے 

پانچواں شعر کی تشریح
معانی: ہم صفیر: ہم آواز ۔ نوائے: عشق کی آواز ۔
مطلب: میں نے جو عشق و محبت کے نغمے الاپے تو میرے ہمراہیوں نے یہ سمجھا کہ جس طرح موسم بہار میں مرغان چمن مست ہو کر اپنی اپنی لے میں گاتے ہیں میرے یہ اشعار بھی شاید موسم بہار کے اثرات سے ہم آہنگ ہیں ۔ معلوم یہی ہوتا ہے کہ یہ لوگ عشق و محبت کے نغموں میں جو سوز و کرب پوشیدہ ہوتا ہے اس سے قطعی واقف نہیں 

شعر کی تشریح چھٹا
معانی: مرے خاک و خوں : میری وجہ سے ۔ صلہَ شہید: شہید کا انعام ۔ تب و تاب: چمک دمک ۔ جاودانہ: ہمیشہ ۔
مطلب: خداوندا یوں لگتا ہے کہ تو نے انہی لوگوں کے خاک و خون سے بطور انعام اس جہان کی تخلیق کی ہے اس لیے کہ شہادت اور قربانی کا صلہ ہمیشہ کی تب و تاب ہی تو ہے
۔

Tujhe Yaad Kya Nahin Hai Roman Urdu

Tujhe Yaad Kya Nahin Hai Mere Dil Ka Woh Zamana
Woh Adab Gah-e-Mohabbat, Woh Nigah Ka Taziyana

Ye Butan-e-Asar-e-Hazir Ke Bane Hain Madrasay Mein
Na Ada’ay Kafirana, Na Taraash-e-Azrana

Nahin Iss Khuli Faza Mein Koi Ghosh’ay Faraghat
Ye Jahan Ajab Jahan Hai, Qafas Na Ashiyana

Rag-e-Taak Muntazir Hai Teri Barish-e-Karam Ki
Ke Ajam Ke Mai Kadon Mein Na Rahi Mai’ay Maghana

Mere Hum Safeer Isse Bhi Asar-e-Bahar Samjhe
Inhain Kya Khabar Ke Kya Hai Ye Nawa’ay Ashiqana

Mere Khaak-o-Khoon Se Tu Ne Ye Jahan Kiya Hai Paida
Sila-e-Shaheed Kya Hai, Tab-o-Taab-e-Javidana

Teri Banda Parwari Se Mere Din Guzar Rahe Hain
Na Gila Hai Doston Ka, Na Shikayat-e-Zamana

Have You forgotten then in English

Have You forgotten then my heart of old
That college of Love, that whip that bright eyes hold?

The school‐bred demi‐goddesses of this age
Lack the carved grace of the old pagan mold

This is a strange world, neither cage nor nest
With no calm nook in all its spacious fold

The vine awaits Your bounteous rain: no more
Is the Magian wine in Persia’s taverns sold

My comrades thought my song were of Spring’s kindling—
How should they know what in Love’s notes is told?

Out of my flesh and blood You made this earth
Its quenchless fever the martyr’s crown of gold

My days supported by Your alms, I do not
Complain against my friends, or the times

Full Book BAL-E-JIBRIL

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *