Mari nawa-e-shauq se (Bal-e-Jibril 1) My Epiphany of Passion

Mari nawa-e-shauq se

Mari nawa-e-shauq se (Bal-e-Jibril : 1) – بالِ جِبریل
اقبالؔ
Bal-e-Jibril : 1
My Epiphany of Passion
 

 

پہلا شعر کی تشریح
معانی: نوائے شوق: شوق کی آواز ۔ حریمِ ذات: عرشِ الٰہی ۔ غلغلہ: ہنگامے ۔ الاماں : خدا کی پناہ ۔ بتکدہَ صفات: کائنات ، ساری دنیا ۔

مطلب: اس مسلسل غزل کے پہلے شعر میں اقبال کہتے ہیں کہ میری عشقیہ اور والہانہ پکار سے بارگاہ ایزدی میں ایک شور و تلاطم برپا ہو گیا جب کہ یہ وہ مقام ہے جہاں کسی فرد کے لیے بھی مداخلت کی گنجائش نہیں ہے ۔ شاعر کو ذات خداوندی سے ایسا والہانہ عشق ہے کہ وہ اس کی صفات کو بھی ایک بتکدے کی مانند اپنی وارفتگی کی راہ میں حائل سمجھتا ہے چنانچہ وہ سمجھتا ہے کہ میری والہانہ صدا اس بتکدہَ صفات کو بھی متلاطم کر گئی 

دوسرا شعر کی تشریح
معانی: تجلیات: دیدار الہٰی کی روشنی ۔
مطلب: میری والہانہ صدا جب حریم ذات میں تلاطم پیدا کر سکتی ہے تو حور و فرشتہ لاکھ غیر مادی سہی پھر بھی وہ میری تخیل کے اسیر ہیں ۔ میں ان کی اصلیت کا مکمل ادراک کر سکتا ہوں ۔ میری بے باک نگاہی نے تو اے والا صفات تیری تجلیوں میں بھی خلل پیدا کر کے رکھ دیا ہے ۔

تیسرا شعر کی تشریح
معانی: جستجو: تلاش ۔ حرم کی نقشبند: کفر و اسلام کے جذبات پیدا کرنے والی ۔ رستخیز: قیامت ۔ کعبہ و سومنات: کعبہ اور مندر ۔

مطلب: اے باری تعالیٰ تجھے پانے کے لیے میں نے بت خانوں اور مسجدوں کی تعمیر کا اہتمام بھی کیا لیکن تلاش بسیار کے باوجود وہاں کچھ نہ ملا تو پھر اپنی فریاد سے میں نے کعبے اور بت خانوں میں قیامت کر دی ۔ اقبال یہاں دراصل اس نکتے کو پیش نظر رکھے ہوئے ہیں کہ ذات الہٰی عبادت گاہوں تک محدود نہیں ہے اس کا نور تو ہر جگہ و مقام پر ہے ۔ اسے دیکھنے کے لیے تو بس دیدہَ بینا کی ضرورت ہے 

شعر کی تشریح چوتھا
معانی: وجود: زندگی کائنات ۔ توہمات: وہم، شک شبہ ۔

مطلب: زندگی میں کبھی ایسا مرحلہ بھی آیا کہ میں نے اپنی تیز نگاہی سے انسانی وجود کی داخلی کیفیتوں اور حقیقتوں کا ادراک کر لیا اور کبھی یوں بھی ہوا کہ اپنے ہی توہمات میں ایسا الجھا کہ اپنی ہی شناخت مشکل ہو گئی ۔ اس شعر میں د و متضاد انسانی اور نفسیاتی کیفیتوں کی طرف اشارہ کیا گیا ہے 

پانچواں شعر کی تشریح
معانی: غضب: ظلم ۔ فاش: ظاہر کردیا ۔ راز: بھید ۔ کائنات: پوری دنیا ۔
مطلب: یہ شعر بظاہر سیدھا سادہ ہے لیکن اتنا سادہ بھی نہیں کہ با آسانی اس کی گہرائی تک پہنچا جا سکے ۔ اقبال کہتے ہیں کہ اس کائنات کے سینے میں ایک میں ہی تو ایک چھپا ہوا را

Meri nawa e shauk se shor hareem e zaat mein
Ghulghula ha’ay Al aman boht kada ay sifat mein

My epiphany of passion causes commotion in the precinct of the divine essenece
strikes terror in the pantheon of his attributes

Hoor e farishta hain aseer mere takhaiyulat mein
Mari nigah se khalal teri taljallyat mein

The houri and the angel are captives of my imaginations
My glance ruffles your manifest ions

Garche hai meri justujoo dari o haram ki naqsh band
Meri faghan se rustkhaiza kaaba o somanat mein

My quest is the archit of the mosque and the idol-house
Though my song causes tumult both in the kaaba and somewhat

Gah meri nigah e taiz cheer gi dil e wujood
Gah ulajh ke reh gi meri touwahamaat mein

My sharp vision pierced through the core of existence
Confounded by my illusions at yet another time

Tu ne ye kya ghazab kiya mujh ko bhi fash kar diya
Main hi tou ak raaz tha sina ay kainat mein

Oh what a rash deed that you did not leave me hidden
I was the only secret in the conscience of the universe

Bal e Jibril – 002
 Agar Kaj ro hain Anjum, Asman tera hai ya mera
Mujhe fiker e jahan kyun ho Jahan tera hai ya mera?
If the stars have strayed to whom do the heavens belong you or me?
Why must i worry about the world to whom does this world belong you or me?

Agar hangama haay shauq se hai la makan khali
Khata kis ki hai ya Rab la makan tera hai ya mera?

If the placeless realm offers no lively secnes of passion and longing
whose fault is that my lord? Does that realm belong to you or to me?

Use subh e azal inkaar ki juraat hoi kyun kar
Mujh maloom kya woh raazdan tera hai ye mera?

On the morning of eternity he dared to say ‘NO’
Boht how would i know why is the your confidant or is he mine?

Muhammad (S.A.W) bhi tera Jibreel bhi, Quran bhi tera
Magar ye harf e shireen tarjuman tera hai ya mera?

Muhammad (PBUH) is yours Gabriel is yours the Quran is yours,
But this discourse this exposition in melodious tunes is it your or is it mine?

Issi koukab ki tabani se hai tera jahan roshan
Zawal e Adam e khaki zayan tera hai ya mera?

 

Your world is illuminated by the radiance of the same star
Whose loss was the fall of Adam that creature of earth was it your or mine?

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *