Insan Aur Bazm e Qudrat || Bang-e-Dra 25

Insan Aur Bazm e Qudrat

Tashreeh of Insan Aur Bazm e Qudrat

معانی: بزم قدرت: قدرت کی محفل، مراد یہ کائنات ۔ خورشیدِ درخشاں : چمکتا ہوا سورج ۔ معمورہَ ہستی: مراد آباد دنیا ۔
مطلب: اس نظم کا اگر گہرائی کے ساتھ مطالعہ کیا جائے تو اس امر کا اندازہ ممکن ہے کہ علامہ نے یہاں پہلی بار فلسفہ خودی کی نشاندہی کی ہے اور یہی فلسفہ آگے جا کر ان کی شاعرانہ فکر کا بنیادی مرکز بنا ۔ چنانچہ اس شعر میں فرماتے ہیں کہ چمکتے ہوئے سورج کے لمحات میں جب میں نے صبح کے وقت کا نظارہ کیاتو اس کائنات سے استفسار کیا جس میں خود میری ذات بھی موجود ہے 

معانی:: پرتوِ مہر: سورج کی روشنی ۔ دم: وجہ، سبب ۔ سیم سیال: بہتی ہوئی چاندی ۔
مطلب: کہ تجھ میں جو اجالا ہے وہ اسی سورج کی روشنی کے سبب ہے اور تیرے دریاؤں کا چاندی کے مانند شفاف پانی بھی اسی کے دم سے ہے ۔
معانی:: محفل کو چمکانا: محفل روشن کرنا، رونق کا سبب بننا ۔
مطلب: یہ سورج ہی ہے جس نے تجھے نور کا زیور پہنایا ہے اور اسی سورج کا وجود تیری بزم میں ایک روشن شمع کے مانند ہ

معانی: خلد: بہشت ۔ سورہَ والشمس: پارہ کی ایک سورہ جس کا آغاز والشمس سے ہوتا ہے یعنی اللہ نے سورج کی قسم کھائی ہے ۔
مطلب: اے کائنات یہ جو تیرے دامن میں گل و گلزار ہیں وہ بہشت کا منظر پیش کرتے ہیں یوں لگتا ہے کہ یہ سب قرآن کریم کے سورہ والشمس کی تفسیریں ہیں 

معانی:: خیمہَ گردوں : آسمان کا خیمہ، مراد آسمان ۔
مطلب: اے دنیا تیرا جو آسمان ہے وہ ایسے خیمے کی طرح سے ہے جس کے گرد سنہری جھالر لٹک رہے ہوں اور افق پر جو سرخی مائل بدلیاں دکھائی دیتی ہیں 

معانی:افق: آسمان کا دور کا کنارہ ۔ لالی: سرخی ۔ مئے گلرنگ: سرخ رنگ کی شراب ۔ خمِ شام: شام کا مٹکا ۔
مطلب: ان کے ساتھ شفق کی سرخی انتہائی بھلی لگتی ہے جس کے سبب شام کا وقت بھی سرخی مائل دکھائی دیتا ہے

معانی:مستور: چھپی ہوئی ۔ سطوت: شان و شوکت، دبدبہ ۔
مطلب: اے دنیا تیرا مرتبہ بہت بلند ہے اور تیری شان بھی بڑی ہے ۔ اسی لیے تیرے دامن میں جو بھی چیز موجود ہے وہ نور کے پردے میں چھپی ہوئی ہے

معانی: سطوت: شان و شوکت ۔ ظلمت: تاریکی، اندھیرا ۔
مطلب: صبح کو دیکھا جائے تو پتہ چلتا ہے کہ یہ بھی تیری عظمت کے گیت گا رہی ہے اور جہاں تک خورشید کا تعلق ہے تو اس کے منظر نامے میں تاریکی کا تصور بھی نہیں کیا جا سکتا
معانی:اختر: ستارہ ۔ کیونکر: کس طرح ۔
مطلب: تیری اس نور کی بستی میں ہر چند کہ میں بھی رہائش پذیر ہوں لیکن اس کی کیا وجہ ہے کہ میری قسمت کا ستارہ روشنی سے محروم ہے ۔

معانی: سیہ روز: جس کا دن تاریک ہو، بدقسمت ۔
مطلب: تیری ان روشنیوں سے دور ہوتے ہوئے میرا وجود ظلمت کے محبس میں ایک قیدی کے مانند ہے چنانچہ میں تجھ سے پوچھتا ہوں کہ پھر کیا وجہ ہے کہ میں ہی تیرے دامن میں رہتے ہوئے بدنصیبی اور بدقسمتی کا شکار ہوں

معانی:بامِ گردوں : آسمان کی چھت ۔
مطلب: میں ابھی اپنے انہی خیالات میں گم تھا کہ معاً کہیں سے میرے کانوں میں آواز آئی تا ہم یہ نہیں کہا جا سکتا کہ یہ آواز آسمان سے یا پھر زمین سے بلند ہوئی 

معانی:وابستہ: بندھی ہوئی ۔ بود و نبود: ہونا یعنی ہستی اور نہ ہونا یعنی نیستی ۔ پےَ گلزارِ وجود: ہستی کے باغ کے لیے ۔
مطلب: اے انسان! اس حقیقت کو جان لے کہ کائنات کا عدم یا وجود صبح دم طلوع ہوتے ہوئے سورج کے دم سے نہیں بلکہ تیری ذات سے ہے کہ تیری ہی ذات ہے جو میرے گلستاں کے لیے ایک باغبان کی مانند ہے

معانی: صحیفہ: کتاب ۔
مطلب: اے انسان! تیرا وجود ہی ہر نوع کی خوبصورتیوں کا مجموعہ ہے اور جہاں تک میرا تعلق ہے میں تو ان خوبصورتیوں اور مظاہر فطرت کے عکس کی طرح ہوں تو ہی عشق کا وہ صحیفہ ہے جس کی تفسیر میری ذات ہے 

معانی:بگڑے کا م بنانا: جو کام غلط ہوئے ہوں انھیں ٹھیک کرنا ۔
مطلب: تو ہی ہے جس نے میرے بگڑے ہوئے کاموں کی مثبت انداز میں تکمیل کی ہے ۔ یہی نہیں بلکہ اس کارکردگی کے ضمن میں جو بوجھ میں نہ اٹھا سکی وہ تو نے ہی اٹھایا ہے

معانی: بے منتِ خورشید: سورج کے احسان کے بغیر ۔
مطلب: جہاں تک میری ذات کا تعلق ہے دیکھا جائے تو وہ سورج کی روشنی کی محتاج ٹھہرتی ہے جب کہ تجھ میں جو چمک اور تابندگی ہے اس کے لیے سورج کی روشنی قطعی طور پر درکار نہیں

معانی: ویراں : ایسی جگہ جہاں کوئی آبادی وغیرہ نہ ہو ۔ منزلِ عیش کی جا: عیش کے ٹھکانے کی بجائے ۔ زنداں : قید خانہ ۔
مطلب: اگر سورج کا وجود نہ ہو تو میرا گلستاں اور میری ہستی ایک ویران صحرا میں تبدیل ہو کر رہ جائے اس کے برعکس تیری ذات سورج کے کسی جوہر کی محتاج نہیں ۔ سورج کے بغیر تو میرے تمام عشرت کدے، عملاً زندانوں میں تبدیل ہو کر رہ جائیں
معانی: رازِ عیاں : کھلا بھید ۔ حلقہَ دامِ تمنا: آرزو کے جال کا حلقہ ۔ الجھنے والا: پھنسنے والا ۔
مطلب: افسوس! اے انسان تو اس راز کو بھی نہ سمجھ سکا جو عملاً بالکل واضح ہے ۔ اس کی وجہ غالباً یہ ہے کہ تو خود ہی اپنی خواہشوں کے دام میں الجھ کر رہ گیا ہے ۔

معانی:پابند مجاز: غیر حقیقی باتوں کو دیکھنے کی عادی ۔ زیبا: مراد مناسب، لائق ۔ گرم نیاز: انکسار میں مصروف ۔
مطلب: یہ کیسی غفلت ہے اور مقام افسوس بھی ہے کہ تیری آنکھ محض ظاہر پرست ہے اور اس کے ساتھ ہی حقائق سے نا آشنا بھی ہے 

مطلب: آخری بات یہ ہے کہ اگر تو اپنی حقیقتوں کا پوری طرح ادراک کر لے تو اس کے بعد تیری بدبختی اور بدنصیبی ختم ہو کر رہ جائے 

Insan Aur Bazm e Qudrat in Urdu Roman

Subah khursheed E durakhsan ko jo daikhan mein nay
Bazam E mamura E husti se ye poocha main nay

Per tu E mehar ka dum sa hey ujala taira
Seem E sayal hai pani taire deryaon ka

Mehar nay noor ka ziavar tujha pahnay hai
Tairi mahfil ko issi shama na chamkaya hai

Gul O Gulzaar taire khuld ke taswiren hain
Ye sabhi surah E wa shamas ke tafsiren hain

Surkh poshak hai phlon ke darkht ke hari
Tairi mahfil main koi sabaz koi laal pari

He taire khayma e gedoon ke taleyi jhalar
Badleyan laal se ati hain ufaq per jo nazer

Kiya bhali lagte hai ankhon ke shafaq ki lali
Main E gulrung khum E sham main tu nay dali

Rutba taira hai bara shaan bari hai tairi
Perda E noor mein mastoor hai her shey tairi

Subha aik geet sarap hain tari sitvat ka
Zair E khurshid neshan tak bhe nasheen zulmat ka

Main bhe abad ho iss noor ke basti main mager
Jal gaya pher mairi taqdir ka akhter khunkar?

Noor sa door ho zulmat mein griftar ho mein
Kyun siyah e roz sayah bakht siyah ker ho mein?

Mein ye kaihta tha ke awaz kaheen sa ayi
Baam E gerdoon sa ya sehan E zameen say ayi

Ajuman husan ke hai tu tairi tasweer ho mein
Ishq ka tu hain saheefa, tairi tafsir ho mein

Mari bighre howa kamon ko banya tu na
Bar jo mujh sa na utha woh uthaya tu na

Noor E khurshid ki mohtaj he husti mari
Or be minnat E khurshid chmak hain tairi

Ah ae raz E ayan ke na samajh na samajh valay
Hulqa E dam e tammana mein ulajh valay

Haye ghafla ka tairi ankh he paband E majaz
Naz zeyba tujhe tu hey mager garm E niaz

Tu agr apne hakeekat sa khaberdar rahay
Na siyah roz rahy phr na siyahkar rahy

Man And Nature in English

Watching at day break the sun come forth

I asked the assembled host of  heaven and earth

That sun it is that clothes you in these ornaments of light

And whose torch burns to keep your concourse bright

Your roses and rose gardens are pictures of paradise

Where the scripture of the sun paints its device

Scarlet the mantle of the flower and emerald of the tree

Green and red sylphs of your consistory

And when into evenings goblet your rose tinted nectar flows

How lovely the twilights soft vermilion glows

Your station is exalted and your splendor over all

Your creatures light lies thick a dazzling pall

To your magnificence the dawn is one high hymn of praise

No rag of night lurks on it in that suns blaze

And l too inhabit this abode of light but why

Is the star burned out that rules my destiny?

Why chained in the dark past reach of any ray

ill faring and ill fated and ill doing must I stay?

You are creations gardener flowers live only your seeing

By your light hangs my being or not being

All beauty is in you I am the tapestry of your suol

I am its key but you are loves own scroll

The load that would not leave  me you have lifted from my shoulder

You are all my chaotic works re-moulder

If I exist it is only as a pensioner of  the sun

Needing no aid from whom your spark burns on

My garden would turn wilderness if the sun should fail

This sojourn of delight a prisons pale

Oh you entangled in the snare of longing and unrest

Still ignorant of a thing so manifest

Dullard who should be proud and still by self contempt enslaved

Bear in your brain illusion deep engraved

If you would weigh your worth at its true rate

No longer would ill faring or ill doing be your fate

Full Book with Translation BANG-E-DRA

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *