Mah e Nau

Mah e Nau | The New Moon | Bang e Dara 024

Mah e Nau

Mah e Nau

Iqbal Poetry with Urdu Translation

معانی: ماہِ نو: پہلی رات کا چاند، ہلال ۔ خورشید: سورج ۔ غرقابِ نیل ہوئی: مصر کے دریائے نیل میں ڈوب گئی ۔ ایک ٹکڑا: اشارہ ہے ہلال کی طرف ۔ تیرتا پھرتا ہے: یعنی اس کا عکس ہلتے پانی میں پڑ رہا ہے ۔
مطلب: اقبال اس نظم میں بیان کرتے ہیں کہ جب سورج اپنا سفر تمام کر کے شام کے دھند لکے میں غرق ہو گیا تو یوں محسوس ہوا کہ اس کے نور کا ایک ٹکڑا سطح آسماں پر ہلال نو کی صورت میں ظاہر ہوا

معانی: طشتِ گردوں : آسمان کی تھالی ۔ شفق: آسمان کی سرخی ۔ خون ناب: خالص خون ۔ نشتر: زخم چیرنے کا باریک اوزار ۔ فصد کھولنا: نشتر سے رگ میں سے خراب خون نکالنا ۔
مطلب: اس لمحے کا منظر بیان کرتے ہوئے کہتے ہیں کہ یہ لمحہ وہ ہے کہ شفق کی سرخی اپنی انتہا پر پہنچ چکی ہے بالفاظ دگر یہ کہا جا سکتا ہے کہ فطرت نے سورج کی سرخی انڈیل کر رکھ دی ہے

معانی: بالی: کان کا بُندا ۔ عروسِ شام: شام یا رات کی دلہن ۔ سیم خام: کچی چاندنی ۔
مطلب: ہلال نو کو دیکھ کر یوں لگتا ہے جیسے شام ایک دلہن کی مانند ہے اور ہلال نو اس کے کانوں کی بالی ہے یا پھر شفاف پانی میں چاندی کے رنگ جیسی مچھلی تیر رہی ہو
معانی: بے منت: احسان کے بغیر ۔ بانگِ درا: قافلے کی گھنٹی کی آواز ۔ گوش: کان ۔ آواز پا: پاؤں کی چاپ ۔
مطلب: تیرا قافلہ گھنٹیوں کے بغیر بڑی خاموشی سے رواں دواں ہے ۔ یہ ایسا سکوت ہے جو انسانی کانوں تک جس کی رسائی ممکن نہیں ۔

مطلب: کبھی تو اپنے حجم میں کم ہو جاتا ہے اور کبھی زیادہ! قدرتی طور پر یہ سوال اٹھتا ہے کہ تیرا سفر کس جانب رواں ہے اور تیری قیام گاہ کہاں ہے
معانی: سیارہَ ثابت نما: ایسا چلنے والا ستارہ جو ایک جگہ پر ٹکے ہوئے دکھائی دیتا ہے ۔ خارِ حسرت: آرزو کا کانٹا ۔ خلش: چبھن ۔ بے کل: بے چین ۔
مطلب: اے رواں دواں رہنے والے سیارے مجھے بھی اپنے ہمراہ لے چل ۔ اس لیے کہ میں خود بھی اس ماحول سے پریشان ہوں جو میرے گردوپیش موجود ہے 

معانی: طفلک: چھوٹا سا بچہ ۔ سیماب پا: جس کے پاؤں حرکت ہی میں رہتے ہوں ۔ مکتب ہستی: یہ دنیا جو انسان کے لیے مقامِ عبرت و درس ہے ۔
مطلب: میں تو تاریکی کے بجائے روشنی کا طالب ہوں اور ایسے بچے کی مانند ہوں جو مدرسے کے نامناسب ماحول سے گھبراتا ہے

Mah e Nau in Roman

Toot ker khursheed ki kashti hui gharkab e neel
Ek tukra tairrta pherta hai ruye Aab e neel

Tasht e gerdoon mein tapakta hai shafak ka khoon e naab
Nashter e kudrat nay kiya hai fasad e aftab

Charakh nay baalli chura le hai uroos e shaam ke
Neel ka paani mein ye machli hai seem e khaam ke

Kafla taira ravan bey minnat e bang e dara
Gosh e Insaan sun naheen sakta tairi avaz e pa

Ghatnay barhnay ka samaan aankhon ko dekhlata hai tu
Hain vatan taira kedhar kis dais ko jata hain tu

Sath ay sayyara E sabit numa lay chal mojhay
Khar E husrat ke khalish rakhte hai ub bay kal mojhey

Noor ka talib hon ghabrata ho iss basti main
Tiflak E seemab pa hon maktab e hastee main main

The New Moon

Allama Iqbal Poetry in English 

The days bright launch has floundered in the whirlpool of  the niel

On  the rivers face one fragment floats eddyingly awhile

Into the bowl of heaven the twilights crimson blood drop run

Has nature with her lancet pricked the hot veins of the sun?

Is that an earring that the sky has thieved from evenings bride

Or through the water does some silver fish quivering glide?

Your caravan holds on its way though no trumpet be blown

Your voice still murmurs though no mortal ear may catch its tone.

All shapes of life that wanes and grows before us you display

Where is your native land. Toward what country lies your way?

You who still wander yet still keep path take me with you

Take me now while these throbbing thorns of torment pierce

I grope for light I anguish in this earth abode a child

In the schoolroom of existence like pale mercury quick and wild.

Full Book with Translation BANG-E-DRA

Leave a Reply

Your email address will not be published.

%d bloggers like this: