Iqbal Poetry

Poetry in Urdu, Roman Urdu and English Translation all about Iqbal Poetry

Zarb-e-Kaleem

Shukar-e-Shikayat | Zarb-e-Kaleem-013

Shukar-e-Shikayat

Shukar-e-Shikayat

Shukar-e-Shikayat urdu Tashreeh

پہلا شعر کی تشریح

معانی: بندہَ ناداں : بے عقل شخص ۔ نہانخانہَ لاہوت: عالمِ بالا کا پوشیدہ مقام ۔

مطلب: اس شعر میں علامہ اقبال اللہ تعالیٰ کاپہلے شکر ادا کرتے ہیں اور کہتے ہیں کہ میں تو ایک نادان سا انسان تھا لیکن تیرے کرم نے مجھے عالم ناسوت (اس مادی دنیا) سے نکال کر عالم لاہوت (اپنے اس پراسرار جہاں سے) متعلق کر دیا ہے جہاں کے افکار و اعمال اس ناسوتی جہان کے اعمال و افکار سے بالکل جداگانہ ہیں اور یہ بات میری شاعری کے موضوعات و مضامین سے صاف ظاہر ہے

دوسرا شعر کی تشریح

معانی: ولولہ: جوش ۔ بخارا و سمرقند: ترکستان کے شہر ۔

مطلب: میں نے ایشیا اور وسطی ایشیا کی قوموں اور ان میں سے بھی خاص طور پر یہاں کے مسلمانوں میں اپنی شاعری اور اپنے پیغام کے ذریعے ایک نیا جوش اور ایک نئی امنگ پیدا کی ہے ۔ ان کو خواب غفلت سے جگایا ہے اور ان میں پھر سے آزادی اور عروج حاصل کرنے کا ولولہ پیدا کیا ہے ۔

تیسرا شعر کی تشریح

معانی: نفس: سانس ۔ مرغانِ سحر: صبح کے پرندے ۔ صبحت: محفل ۔ خورسند: خوش ۔

مطلب: میں نے وہ پیغام جو اپنے کلام کے ذریعے دل وجان کی گہرائی اور خلوص نیت سے دیا ہے اس کا یہ اثر ہوا ہے کہ خزاں کے موسم میں بھی جو پرندے علی الصبح نغمے الاپتے ہیں ( جو لوگ غلامی سے آزاد ہونا چاہتے ہیں ) میری صحبت میں خوش ہیں ۔ میرے پیغام پر کان دھرتے ہیں لیکن حالات انہیں کچھ کرنے نہیں دیتے

چوتھاشعر کی تشر یح   

معانی: رضامند: راضی ۔

مطلب: لیکن اے میرے پیدا کرنے والے مجھے تجھ سے خاکم بدہن یہ شکوہ ہے کہ مجھے ایسے ملک میں پیدا کر دیا ہے جو غلام ہے ۔ نہ صرف یہ کہ ملک غلام ہے بلکہ یہاں کے لوگ اپنی غلامی پر مطمئن ہیں ۔ اے کاش میں کسی آزاد وطن اور کسی آزاد قوم میں پیدا ہوا ہوتا تو پھر دنیا کو میرے پیغام کی تاثیر، اس کے نتیجہ اور میری قدر و قیمت کا پتہ چلتا

Shukar-e-Shikayat in Roman Urdu

Main Band-e-Nadan Hun, Magar Shukar Hai Tera

Rakhta Hun Nihan Khana-e-Lahoot Se Pewand

 Ek Walwala Taza Diya Main Ne Dilon Ko

Lahore Se Ta-Bakhak-e-Bukhara-o-Samarqand

Taseer Hai Ye Mere Nafas Ki Ke Khazan Mein

Murghan-e-Sehar Khawan Meri Sohbat Mein Hain Khoursand

Lekin Mujhe Paida Kiya Uss Dais Mein Tu Ne

Jis Dais Ke Bande Hain Ghulami Pe Razamand!

Thanks Cum Complaint  in English

 

Though unwise, thanks to God I must express

For bonds with celestial world that I possess.

My songs fresh zeal to hearts of men impart,

Their charm extends to lands that lie apart. 

In Autumn my breath makes birds that chirp in morn,

Imbibe much joy and feel no more forlorn. 

O God, to such a land I have been sent,

Where men in abject bondage feel content.

Full Book Zarb-e-Kaleem 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *